ad

میرا نقطہ نگاہ

اعظم سواتی جھوٹ کیوں بول رہے ہیں


اعظم سواتی جھوٹ پر جھوٹ بولتے جا رہے ہیں اور ہر جھوٹ پکڑا جا رہا ہے۔ ان کی جس زمین پر ہمسائیوں کی گائے گھس آئی تھی اس پر سواتی صاحب نے ناجائز قبضہ کیا ہوا ہے۔ ان کے ہمسائے میں بھی کچھ غریب خاندان بھی سرکاری زمین پر قابض ہیں، سواتی صاحب ان سے وہ زمین خالی کرانا چاہتے ہیں تاکہ اپنے زیر قبضہ رقبے میں اضافہ کر سکیں۔ گائے کے پردے میں ایکڑوں پر محیط قیمتی سرکاری اراضی ہتھیانے کا معاملہ چل رہا ہے۔

اس ملک میں کروڑوں لوگ ایسے ہیں کہ اڑھائی مرلے کے مکان کا خواب دیکھتے جن کی کئی نسلیں گزر چکی ہیں۔ اس کے برعکس 46 کنال کے فارم ہاؤس کے مالک ہونے کے باوجود اعظم سواتی کی حرص ختم نہیں ہو رہی۔

ان کی منطق سنیں۔ کہتے ہیں کہ میں نے کئی بار سی ڈی اے کو کہا ہے کہ ہمارے ہمسائے میں وزیرستان سے تعلق رکھنے والے لوگ رہائش پذیر ہیں۔ ایسے لوگ سیکیورٹی رسک ہیں انہیں یہاں سے نکالا جائے لیکن میری بات نہیں سنی گئی۔

میری نظر میں تو اعظم سواتی جیسے لوگ پاکستان کے لیے سیکیورٹی رسک ہیں جو اربوں کھربوں کے مالک ہیں لیکن پھر بھی ان کا حریص پیٹ بھرنے کو نہیں آ رہا۔ جب بھوک معدے کے بجائے نفسیات میں بیٹھ جائے تو دنیا کی تمام نعمتیں بھی اسے نہیں مٹا سکتیں۔ زمین کا معاملہ بھی ایسا ہی ہے۔

مجاہد خٹک