ad

بلاگ

قربانی کے مہنگے جانور اور بائیکاٹی دانشوریاں


موبائیل فون رابطے کیلئے ہوتا ہے اور رابطے کیلئے کال اور میسج کافی ہے۔یعنی کہ 1200روپے کا نوکیا 1112آپ کی یہ ضرورت پوری کرسکتا ہے۔تو کیا وجہ ہے کہ ہم مہنگے آئی فون، سیم سینگ گلیکسی وغیرہ استعمال کررہے ہیں۔کیوں نہ ان مہنگے موبائیلوں کا بیچ کر غریب ضرورت مندوں کی مدد کی جائے اور انہیں قربانی کا جانور خرید کر دیا جائے۔
گھر سر چھپانے کیلئے ہوتا ہے سر جھونپڑی میں بھی چھپایا جاسکتا ہے تو کیوں نہ ہم اپنے اچھے شاندار گھر بیچ دیں اور جھونپڑیوں میں رہنا شروع کردیں باقی پیسوں سے غریبوں کی مدد کریں۔

کپڑے تن ڈھانپنے کیلئے ہوتے ہیں اور تن پرانے کپڑوں سے بھی ڈھانپا جاسکتا ہے اس لئے کیوں نہ ہم لنڈا بازار کے پرانے کپڑے پہنا کریں اور باقی پیسوں سے غریبوں کی مدد کردیا کریں۔

کھانا پیٹ بھرنے کیلئے ہوتا ہے اور پیٹ سوکھی روٹی اور پیاز کھانے سے بھی بھر جاتا ہے تو کیوں نہ ہم مک ڈونلڈکے برگر، بریانیاں اور دیگر لوازمات و اچھا کھانا ترک کر پیسے بچائیں اور غریبوں کی مدد کریں۔

وقت سب سے قیمتی چیز ہے ہم کافی وقت فیس بک پر ضائع کرتے ہیں تو کیوں نہ ہم فیس بک سے سنیاس لے لیں اور اس دوران جو وقت ہم فیس بک پر ضائع کرتے ہیں اس میں محنت مزدوری کریں اور حاصل شدہ آمدنی سے غریبوں کی مدد کردیا کریں۔

جب آپ یہ سب کچھ کرچکے تو مجھے بتائیے گا پھر ہم قربانی کے 30لاکھ کے اچھے اور صحت مند جانور کو لینے کے بجائے 2لاکھ کا لاغر و کمزور جانور اللہ کی راہ میں قربان کرنے اور باقی پیسوں سے غریبوں کی مدد کرنے کی مہم چلائیں گے۔

اپنی ہڈحرامیوں اور عیاشیوں پر تو ضرورت مند یاد نہیں آتے لیکن جہاں حقوق اللہ کی بات آئی ضرورت مند یاد آجاتے ہیں۔

میں یہ بھی نہیں کہوں گا کہ ہر چز حد میں اچھی لگتی ہے۔ہر شعبے کے الگ قوانین ہوتے ہیں۔اسلام میں بھی مختلف اقسام کے حقوق متعین کئے گئے ہیں۔جو حقوق گھر والوں کے ہیں وہ پڑوسیوں کیلئے نہیں ہیں، جو پڑوسیوں کے ہیں وہ اہل محلہ کیلئے نہیں ہیں۔

اللہ کے حقوق صرف اللہ کیلئے ہیں بندوں کے حقوق صرف بندوں کیلئے ہیں۔دونوں کی ادائیگی پر اجر اللہ ہی دے گا۔توازن قائم رکھیئے، غریبوں کی مدد الگ سے کریں اور اللہ کی راہ میں بہترین سے بہترین اور اچھے سے اچھا جانور قربان کریں۔

وہ خالق ہے وہ آپ کی نیت دیکھتا ہے آپ کا جزبہ دیکھتا ہے آپ کی اچھے سے اچھے کی نیت یقیناً اللہ کو پسند آئے گی۔
تنویراعوان